Thursday, February 22, 2024

Hazrat Muhammad P.B.U.H Ka Husn e Salook

شاہ مدینہ کے حسن اخلاق کی کوئی حد نہیں اور نہ ہی نرمی اور ملائمت کی کوئی انتہا ہے اس کا ثبوت ہمیں حضرت انس کی اس روایت سیے ملتا ہے کہ شاہ مدینہ مدینہ کے بازار میں جا رہےتھے ، میں ( حضرت انس)بھی ہمراہ تھے – رسولﷺکے کندھوں پر چادر تھی۔

جو نجران کی بنی ہوئی تھی۔ اس کا حاشیہ چوڑا اور کھردرا تھا۔ اچانک ایک دیہاتی سامنے آ گیا۔ اس نے حضور ﷺ کی چادر کو ہاتھ ڈالا – چادر کو کھینچا اور اس قدر زور سے کھینچا کہ حضور ﷺ کے کندھے پر نشان پڑ گیا۔ میری نگاہیں اس نشان پر مرکوز ہو گئیں ساتھ ہی دیہاتی بولنے لگا:

يَا مُحَمَّدُ مُرُ لِي مِنْ مَّالِ اللَّهِ الَّذِي عِنْدَكَ

” اے محمدﷺ تمھارے پاس جو اللہ کا مال ہے۔ اپنے کسی ذمہ دار کو حکم دو کہ اس مال میں سے وہ مجھے بھی مال دے”۔
اللہ کے رسول ﷺ نے دیہاتی کی طرف دیکھا ” فَضَحِكَ “ تو مسکرا دیے۔ اور پھر اس دیہاتی کو مال دینے کا حکم دے دیا۔

Latest Posts

Related POSTS